ذہنی صحت کو بڑھانے والی 7شاندار غذائیں

ذہنی صحت کو بڑھانے والی 7شاندار غذائیں

ذہنی صحت کو بڑھانے والی 7شاندار غذائیں

اکثر دیکھا گیا ہے کہ لوگ صحت مند غذا کی منصوبہ بندی کرتے وقت وزن میں کمی کو فروغ دینے والے کھانوں کا انتخاب کرتے ہیں۔ چاق و چوبند اور توانا رہنے کے لیے اگرچہ صحت مند غذائوں کا استعمال کرنا بہت ضروری ہے، لیکن آپ کو اس بات سے بھی آگاہ ہونا چاہیے کہ آپ کے کھانے کا انتخاب آپ کے دماغ کو کیسے متاثر کر سکتا ہے۔

اپنی کمر کو مضبوط بنانے کے علاوہ، آپ روز مرہ کے کھانوں کے ذریعے اپنے دماغ کے افعال کو بھی بہتر بنا سکتے ہیں اور ممکنہ طور پر ذہنی امراض سے لڑنے میں مدد کر سکتے ہیں۔ اگر آپ اپنی روز مرہ خوراک میں یہاں درج یہ سات اہم کھانے شامل کرتے ہیں تو یقیناً آپ کی ذہنی صحت بہتر ہوگی بلکہ یادداشت اور بصیرت میں بھی اضافہ ہوگا۔۔

چکن:

چکن میں ٹرپٹوفن ہوتا ہے اور امینو ایسڈ جو مرغی کی ہی نسل سے تعلق رکھنے والی ٹرکی میں بھی اچھی خاصی مقدار میں پایا جاتا ہے، یہ  پروٹین کی تلاش میں رہنے والے افراد کے لیے ایک بہترین انتخاب ہے۔ کھانے میں چکن لینے سے آپ کے دماغ کو سیروٹونن پیدا کرنے میں مدد ملتی ہے، جو اسے مزاج اور کیفیات کو منظم کرنے، ڈپریشن سے لڑنے اور مضبوط یادوں کو برقرار رکھنے میں مدد کرتا ہے۔

 

خام اناج:

پھلیاں، سویا، جئی، دلیہ اور جنگلی چاولوں جیسے متعدد کھانے خام اناج کے زمرے میں آتے ہیں۔ اس حقیقت کے باوجود کہ انسانی جسم اور دماغ توانائی کے لیے کاربوہائیڈریٹس پر انحصار کرتے ہیں، ہم اپنی روز مرہ خوراک میں بہت زیادہ سادہ کاربوہائیڈریٹ کھاتے ہیں، جس کی وجہ سے بدن میں بلڈ شوگر کی سطح بڑھ جاتی ہے اور اس کے بہت سے سائیڈ افیکٹس سامنے آتے ہیں۔ خام اناج کی خوراک میں کثیرمقدار میں کاربوہائیڈریٹ شامل ہوتے ہیں جو گلوکوز کو زیادہ اور آہستگی کے ساتھ پیدا کرتے ہیں نتیجے میں آپ کے جسم کو مستحکم اور پائیدار توانائی فراہم کرتے ہیں۔

دماغ کو ٹرپٹوفن جذب کرنے میں مدد دینے کے علاوہ، خام اناج چکن اور ٹرکی جیسی کھانوں کے ساتھ کھائے جانے پر ڈپریشن اور پریشانی کی علامات کو کم کرنے کے لیے بھی بے حد فائدہ مند ہے۔

 

پالک:

پتوں والی سبزیاں، جیسے پالک اور بند گوبھی یا ساگ وغیرہ آپ کے دماغ کو فولک ایسڈ کی بہترین سطح فراہم کرتے ہیں، جس کی افادیت کو طبی ماہرین کی جانب سے ڈپریشن کو کم کرنے کے لیے بہترین ذریعہ تسلیم کیا جاتا  ہے۔ اس کے علاوہ، یہ بوڑھے افراد میں ڈیمنشیا کو کم کرنے اور بے خوابی سے لڑنے کے لیے بھی جانا جاتا ہے، یہ دونوں امراض یعنی ڈیمینشیا اور بے خوابی ذہنی خرابی سے مضبوطی سے جڑے ہوئے ہیں۔

 

دہی:

کھانے کی متعدد مصنوعات ہیں جو دنیا کی مختلف ثقافتوں میں یکساں مقبول ہیں، بشمول دہی اور دیگر دودھ کی مصنوعات کے جن میں پنیر، مکھن، لسی، کھویا وغیرہ شامل ہیں۔ اعصابی تناؤ اور اضطراب کو پروبائیوٹکس سے کم کیا جا سکتا ہے، جو اکثر آپ کے ہاضمے سے وابستہ ہوتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ دہی آپ کے جسم کو  پوٹاشیم اور میگنیشیم بھی فراہم کرتا ہے، جو دماغ کو آکسیجن پہنچا کر فائدہ پہنچاتا ہے جس کے نتیجے میں ذہنی امراض کا خطرہ کم سے کم ہوتا جاتا ہے۔

 

زیتون کا تیل:

زیتون کا استعمال بحیرہ روم کی صحت مند غذا کے طور پر کافی مقبول ہو چکا ہے۔ اس کے تیل میں موجود پولیفینول جسم کو الزائمر کی بیماری کے اثرات سے بچانے میں مدد دیتے ہیں جو کہ پروٹین کی کمی بیشی سے جڑی ہوئی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ زیتون یا اس کے تیل کا باقاعدہ استعمال یادداشت اور سیکھنے کے نظام کو بہتر بنا سکتا ہے۔

تاہم، زیتون کا تیل خریدتے وقت اسے احتیاط کے ساتھ دیکھنا چاہیے کیونکہ آج کل بازار میں سبزیوں یا بیجوں کے تیل کو بھی دماغی صحت میں بہتری لانے والی مصنوعات کے طور پر پیش کیا جارہا ہے تاہم زیتون کا تیل خردیتے ہوئے برانڈز کی آن لائن تحقیق کرکے یقینی بنائیں کہ کس برانڈ میں زیتون کا تیل خالص ہے۔

ٹماٹر:

ٹماٹڑ کو دنیا بھر میں ایک زبردست اور فائدہ مند فائٹونیوٹرینٹ کے طور پر جانا جاتا ہے، لائکوپین ٹماٹر کی سرخ رنگت کا ذریعہ ہے۔ یہ سپلیمنٹ بہت سے دوسرے صحت کے فوائد کے ساتھ ساتھ دماغی بیماریوں سے لڑنے میں بھی مدد کرسکتا ہے۔ یہ انسنای جسم کے خلیات کو پہنچنے والے نقصان سے روکتا ہے اور الزائمر کی بیماری کے بڑھنے کی رفتار کو سست کردیتا ہے۔

یادداشت، توجہ، منطق اور ارتکاز میں مدد کرنے کے ساتھ ساتھ، لائکوپین کو بہت سی دوسری خصوصیات میں مدد کرنے کے لیے تسلیم کیا گیا ہے اور قدرت کا یہ انمول تحفہ ٹماٹر میں بکثرت پایا جاتا ہے۔

 

ڈارک چاکلیٹ:

چاکلیٹ اگر بالکل سیاہ ہو تو اسے ڈارک چاکلیٹ کہا جاتا ہے اور اس کی الگ سے درجہ بندی کی جاتی ہے کیونکہ اس میں بڑی مقدار میں کوکو شامل ہوتا ہے، اس لیے اسے عام برائون چاکلیٹ سے زیادہ بہتر سمجھا جاتا ہے۔ ڈارک چاکلیٹ میں پایا جانے والا کوکو دودھ سے بنی چاکلیٹ میں نہیں ہوتا۔ اس کے علاوہ، ڈارک چاکلیٹ کو کم از کم پچاسی فیصدکوکو کے ساتھ، سب سے صحت مند سمجھا جاتا ہے۔

فلاوونائڈز، جو کہ اینٹی آکسیڈنٹ ہیں، ڈارک چاکلیٹ میں وافر مقدار میں پائے جاتے ہیں۔ مطالعے سے پتہ چلتا ہے کہ یہ توجہ، میموری، موڈ اور سنجیدگی سے کام کرتا ہے. جب چاکلیٹ کے استعمال کی بات آتی ہے تو ایک ہی بات کا خیال رکھنے کی ضرورت ہے کہ چاکلیٹ کھاتے وقت اعتدال سے کام لیا جائے۔

not null

کھانے کی شوقین

مترجم : Kamran Shah

 

اپنی رائے دیں

 

رائے (1)

  • Ben Mo
    (1 month ago)
    It's great to talk about food. I wrote a lot of articles about food, the most important of which are: A GOOD CHOICE FOR THE EARTH, bio food vitamin c chewables https://treasure4us.com/bio-food-vitamin-c-chewables/
    جواب

اپنے ان باکس میں ترکیبیں، تجاویز اور خصوصی پیشکشیں حاصل کریں